نماز کے دوران جیب سے موبائل نکال کر گھنٹی بند کرنا

سوال

 اگر  کوئی شخص نماز سے پہلے موبائل بند کرنا بھول گیا اور  دورانِ نماز موبائل کی گھنٹی بجنے لگے  اور وہ شخص جیب سے موبائل نکال کر گھنٹی بند کرکے واپس مو

 

جواب

 

 نماز سے پہلے ہی موبائل کی گھنٹی اہتمام سے  بند کردینی چاہیے؛ تاکہ نماز میں خلل نہ ہو، لیکن اگر گھنٹی بند کرنا بھول گیا اور نماز میں گھنٹی بجنے لگی تو ایک ہاتھ  جیب میں ڈال کر گھنٹی کو بند کردے، موبائل نکالنا اور اسے دیکھنا درست نہیں ہے،  نماز کے دوران ایک ہاتھ سے موبائل نکال کر  مختصر وقت میں اسکرین دیکھنے اور  گھنٹی بند کردینے سےنماز فاسد تو نہیں ہوتی، البتہ نماز میں کراہت آجاتی ہے۔  لیکن اگر  دونوں ہاتھوں سے موبائل پکڑا،  یا ایک ہاتھ سے ایسے انداز میں پکڑ کر اسکرین کو دیکھا  کہ دور سے  دیکھنے والا یہ سمجھے کہ یہ شخص  نماز  نہیں پڑھ رہا ہے تو نماز فاسد ہوجائے گی؛ کیوں کہ یہ عملِ کثیر ہے، اور نماز کے دوران عملِ  کثیر کا ارتکاب کرنے سے نماز فاسد ہوجاتی ہے۔

عملِ کثیر  کی تعریف میں فقہاءِ کرام کے متعدد اقوال ہیں، مفتیٰ بہ اور راجح قول یہ ہے کہ کوئی ایسا کام کرنا کہ دور سے دیکھنے والے کو یقین ہوجائے  کہ یہ کام کرنے والا نماز نہیں پڑھ رہا، جس کام کی ایسی کیفیت نہ ہو وہ عملِ قلیل ہے اور عملِ قلیل سے نماز فاسد نہیں ہوتی۔ اور عموماً موبائل کی گھنٹی عملِ قلیل سے بند کی جاسکتی ہے، لہٰذا اپنی اور دوسروں کی نماز کو خلل سے بچانے کے لیے موبائل کی گھنٹی بند کردینی چاہیے۔

واضح رہے کہ موبائل میں موسیقی سے پاک سادہ گھنٹی لگانی چاہیے، تاکہ خاموش وضع پر کرنا بھول جانے کی صورت میں دورانِ نماز گھنٹی بج جائے تو نماز میں خلل بھی کم ہو اور موسیقی کے گناہ سے بچنے کے ساتھ ساتھ مسجد کے تقدس کی خلاف ورزی بھی لازم نہ آئے۔

فتاوی بینات میں ہے:

"جب نماز کے لیے مسجد میں آئیں تو مسجد میں داخل ہونے سے پہلے ہی موبائل فون یا کم از کم اس کی گھنٹی بند کردینا چاہیے اور اس کو اپنی روز مرہ کی عادت بنا لینا چاہیے،  لیکن اگر بتقاضائے بشریت موبائل فون بند کرنا بھول جائے اور ایسی صورت میں دورانِ نماز موبائل فون کی گھنٹی بجنے لگے تو اس کے کسی بٹن کو دبا کر اسے بند کردیا جائے، اگر دائیں جیب میں موبائل ہو تو دائیں ہاتھ سے اور اگر بائیں جیب میں ہو تو بائیں ہاتھ سے بند کیا جائے، اس طرح کرنے سے نہ تو عمل کثیر لازم آتا ہے اور نہ ہی نماز فاسد ہوتی ہے۔

ہاں اگر کوئی موبائل فون اپنی جیب سے نکال کر پھر  بند کرے یا بار بار گھنٹی آنے کی صورت میں وہ موبائل فون بار بار بند کرتا رہے تو اگر ایک رکن میں تین دفعہ یہ عمل دھرایا گیا تو بعض فقہاء کے نزدیک یہ عملِ کثیر کے زمرے میں آئے گا جس سے نماز فاسد ہوجائےگی۔"

(۲/ ۴۰۶، مکتبہ بینات)

فتاوی شامی میں ہے:

 

واللہ اعلم باالصواب دارلافتاء مظہر العلوم طالب دعا مولوی عبدالستار حسنی صاحب


Khadam Ali

35 Articles posts

Comments
Nasir Chaand 29 w

Good

 
 
Nasir Chaand 29 w

Great Job